وزیراعلیٰ سندھ کی چھوٹے تاجروں کیلئے متبادل بنیادوں پر دکانیں کھولنے کی تجویز

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے اسٹینڈر آپریٹنگ پروسیچر (ایس او پیز) کے تحت چھوٹے تاجروں کو روٹیشن (متبادل) بنیاد پر دکانیں کھولنے کی تجویز دے دی۔کراچی میں وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ سے تاجروں کے وفد نے ملاقات کی اور دکانیں کھولنے سے متعلق طریقہ کار پر تبادلہ خیال کیا گیا۔اس موقع پر وزیراعلیٰ سندھ نے ایس او پی کے تحت چھوٹے تاجروں کو ہوم ڈیلوری کے ذریعے کام کرنے کی ہدایت دی۔دوران اجلاس وزیراعلیٰ سندھ نے ایس او پی کو مدنظر رکھ کر چھوٹے تاجروں کو روٹیشن کی بنیاد پر دکان کھولنے کی تجویز بھی دی۔مراد علی شاہ نے کہا کہ ہفتے کے دن بانٹ لیتے ہیں کہ کس دن کس شعبے کی دکانیں کھلیں گی، ساتھ ہی انہوں نے یہ تجویز دی کہ جس دن کپڑے کی دکانیں کھلیں اسی روز درزی اور اس سے منسلک شعبوں کی دکانیں کھولی جائیں۔اسی طرح مراد علی شاہ نے تجویز دی کہ جس دن اے سی کی دکانیں کھلیں گی اسی دن الیکٹرانک، اے سی لگانے والوں کی دکانیں بھی کھولیں گے۔دوران اجلاس مراد علی شاہ کی جانب سے صوبائی وزرا سعید غنی، سید ناصر حسین شاہ، امتیاز علی شیخ پر مشتمل ایک کمیٹی بھی قائم کی گئی ہے۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ مجوزہ کمیٹی 24 گھنٹوں میں تاجروں سے مل کر ایس او پیز بنائے گی۔اجلاس کے دوران وزیراعلیٰ سندھ نے ایس آر بی ٹیکسز اور صوبائی ایکسائز کے ٹیکسز میں کاروباری لوفوں کو بڑی رعایت دینے کا بھی اعلان کیا۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ چھوٹے تاجروں کو قرضے دلانے کے لیے وہ وفاقی حکومت سے بات کریں گے۔انہوں نے کہا کہ کمیٹی تاجروں سے مل کر تمام تجاویز اور ایس او پیز پر بات کرکے 24 گھنٹوں میں اپنی سفارشات دے گی، میں ان سفارشات پر وفاقی حکومت سے بات کروں گا، جس کے بعد ایس او پی کے تحت اجازت دیں گے۔خیال رہے کہ سندھ کے تاجروں کی جانب سے پہلے 15 اپریل کو کاروبار کھولنے کا اعلان کیا تھا تاہم بعد ازاں انہوں نے اسے کچھ دن کے لیے مؤخر کردیا تھا۔تاجروں کی جانب سے یہ مطالبہ کیا جارہا ہے کہ حکومت انہیں کاروبار کھولنے کی اجازت دے کیونکہ موجودہ صورتحال میں چھوٹے تاجر فاقہ کشی پر مجبور ہوگئے ہیں۔یہاں یہ واضح رہے کہ 15 اپریل سے سندھ میں لاک ڈاؤن میں کچھ شعبوں کو ایس او پیز کے تحت کام کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔تاہم وزیراعلیٰ سندھ نے ایک پریس کانفرنس میں یہ کہا تھا کہ ہم نے لاک ڈاؤن میں نرمی نہیں کی بلکہ اسے مزید سخت کردیا ہے۔واضح رہے کہ اس وقت سندھ میں کورونا وائرس کے کیسز کی تعداد 2217 ہے جبکہ یہاں 47 افراد وائرس سے انتقال کرچکے ہیں۔اس وائرس سے سب سے زیادہ شہر قائد متاثر ہے جہاں 1290 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جبکہ صرف کراچی میں اموات کی تعداد 43 ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں