عالمی برادری وائرس کو روکنے کیلئے کم لاگت کی ویکسین فراہم کرے، آئی ایم ایف

واشنگٹن: بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ مہلک کورونا وائرس کی وبا کو روکنے کے لیے عالمی سطح پر کم لاگت کی ویکسین فراہم کرے۔ چین میں دسمبر 2019 میں شروع ہونے والی وبا سے پوری دنیا میں تقریبا ایک لاکھ 50 ہزار سے زائد افراد ہلاک جبکہ 22 لاکھ سے زائد افراد متاثر ہوچکے ہیں۔2020 کے لیے اپنی مالی مانیٹرنگ رپورٹ میں آئی ایم ایف نے ’عالمی سطح پر کم لاگت والی ویکسین کے لیے ہم آہنگی اور صحت کی محدود صلاحیت والے ممالک کی مدد کرنے کی ضرورت پر زور دیا ‘۔آئی ایم ایف نے خدشہ ظاہر کیا کہ وائرس سے پیدا ہونے والے معاشرتی اور معاشی بحران پرعدم توجہ یا غیر سنجیدگی سے بعض ممالک میں بدامنی کی نئی لہر پیدا ہوسکتی ہے۔علاوہ ازیں رپورٹ میں حکومتوں پر زور دیا گیا کہ وہ اس وقت تک تعاون جاری رکھیں جب تک کہ حالات مستحکم نہ ہوں۔آئی ایم ایف نے خبردار کیا کہ بنیادی سامان اور توانائی سے متعلق مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے یومیہ اجرت کمانے والوں کو سخت حالات کا سامنا ہے۔رپورٹ میں کہا گیا کہ معاشرے کے محروم طبقے سے بنیادی حقوق چھین لیے گئے تو سخت مخالفت جنم لے سکتی ہے اور ایسی مخالفت شہری متوسط طبقے کی طرف سے ہوگی۔آئی ایم ایف نے حکومتوں کو خبردار کیا کہ بڑے پیمانے پر بدعنوانی، عوامی پالیسی میں شفافیت کا فقدان اور سروسز کی ناقص فراہمی کی تاریخ رکھنے والے ممالک میں بدامنی کے خطرات زیادہ ہیں۔بدامنی کی روک تھام کے لیے اقدامات پر روشنی ڈالتے ہوئے آئی ایم ایف نے کہا کہ صحت اور ہنگامی خدمات پر خرچ کرنا اہم ترجیح ہونی چاہیے۔آئی ایم ایف نے مزید بتایا کہ متاثرہ کارکنوں اور اداروں کے لیے ہنگامی صورتحال ختم ہونے تک بڑی، عارضی اور ٹارگیٹڈ سپورٹ کی اشد ضرورت ہے۔آئی ایم ایف کے اعلامیے میں کہا گیا کہ آئی ایم ایف کے ایگزیکٹو بورڈ نے کورونا وائرس کے باعث ادائیگیوں کے فوری توازن کو پورا کرنے کے لیے آر ایف ای کے تحت ایک ارب 38 کروڑ ڈالر (50 فیصد کوٹہ) پاکستان کے لیے منظور کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں